283

تعلیمی اداروں اور پبلک دفاتر میں سگریٹ نوشی پر پابندی کا حکم

لاہور ہائیکورٹ نے تعلیمی اداروں اور پبلک دفاتر میں سگریٹ نوشی پر پابندی کے قوانین پر سختی سے عملدرآمد کا حکم دےدیا۔ ہائیکورٹ کے جسٹس علی اکبر قریشی نے کیس کی سماعت کی۔ درخواست گزار کی جانب سے موقف اختیار کیا گیا کہ تعلیمی اداروں اور پبلک دفاتر میں سگریٹ نوشی کی جاتی ہے جو قانون کیخلاف ہے۔ صحت پر برا اثر پڑتا ہے پبلک دفاتر میں سموکنگ کرنے سے بیماریاں پھیل رہی ہیں۔ درخواست گزار نے استدعا کی کہ عدالت پبلک دفاتر اور تعلیمی اداروں میں سگریٹ نوشی پر پابندی پر عملدرآمد کو یقینی بنانے کا حکم دے۔ عدالت نے ریمارکس دیئے کہ پبلک دفاتر اور تعلیمی اداروں میں سگریٹ نوشی نہیں کی جاسکتی۔ متعلقہ ادارے اس حوالے سے موثر اقدامات کیوں نہیں کر رہے۔ عدالت نے چیف سیکرٹری کو پابندی کے حوالے سے متعلقہ اداروں کو نوٹسز جاری کرنے کا حکم دیتے ہوئے ڈی جی سوشل ویلفیئر کو آج طلب کرلیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں