164

خواجہ برادران کو آزادی کا پروانہ مل گیا

لاہور ہائیکورٹ نے مسلم لیگ ن کے رکن قومی اسمبلی خواجہ سعد رفیق اور ان کے بھائی خواجہ سلمان رفیق کی درخواست ضمانت میں 14 نومبر تک توسیع کردی۔ عدالت نے نیب کو خواجہ برادران کی گرفتاری سے تاحکم ثانی روک دیا۔ لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس علی باقر نجفی کی سربراہی میں دو رکنی بنچ نے خواجہ سعد رفیق کی درخواست پر سماعت کی۔ خواجہ برادران عدالت میں پیش ہوئے ان کے وکلاءاعظم نذیر تارڑ اور امجد پرویز ایڈووکیٹ نے موقف اختیار کیا کہ دونوں بھائی پیراگون سٹی اور آشیانہ ہاﺅسنگ سکیم کے معاملے میں بے قصور ہیں۔ نیب نے جو ریکارڈ مانگا وہ فراہم کردیا۔ خدجہ ہے کہ نیب کی جانب سے گرفتار کرلیا جائیگا۔ نیب کے سپیشل پراسیکیوٹر رانا عارف نے عدالت کو بتایا کہ 23اکتوبر کو ہائیکورٹ میں جواب داخل کرا دیا ہے کہ سعد رفیق کیخلاف پیراگون سٹی‘ آشیانہ ہاﺅسنگ سکیم اور ریلوے جبکہ سلمان رفیق کے خلاف پیراگون کا ایک کیس زیرالتوا ہے۔ خواجہ برادران کے وکیل نے بتایا کہ نیب کی ٹیم بلاتی کسی اور کیس میں اور گرفتار کسی اور کیس میں کر لیتی ہے۔لاہور ہائیکورٹ نے دلائل مکمل ہونے پر خواجہ برادران کی حفاظتی ضمانت میں 14نومبر تک توسیع کرتے ہوئے نیب کو گرفتار ی سے روکتے ہوئے فریقین کے وکلاءکو دلائل کیلئے طلب کرلیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں