62

صفائی ملازمین کی ہڑتال،شہر میں گندگی کے ڈھیر

تنخواہوں اور کنٹریکٹرز کی اربوں روپے ادائیگیوں کے معاملے نے مکینوں کی زندگیاں اجیرن بنا دیں۔ ایل ڈبلیو ایم سی کی ایک صفائی کمپنی البراک کے ورکرز نے تنخواہیں نہ ملنے پر ہڑتال کر دی ،آدھا شہر کوڑا کرکٹ کا منظر پیش کرنے لگا ۔تفصیلات کے مطابق ایل ڈبلیو ایم سی کی ایک صفائی کمپنی البراک کے ورکرز نے تنخواہیں نہ ملنے پر ہڑتال کر دی ،کمپنی ذمہ داران کی طرف سے گزشتہ روز تنخواہوں کی مد میں چار کروڑ روپے کی ادائیگی کی گئی مگر کنٹریکٹرز کو مکمل ادائیگیاں نہ ہونے کی وجہ سے ڈرائیورز ،سپر وائرز اور سینٹری لوڈرز نے ورکشاپس کو تالے لگا دیئے ۔آدھے لاہور میں موجود ساڑھے چار ہزار کنٹینرز کوڑے سے بھرے ہوئے تعفن پھلا رہے ہیں ۔والٹن، بھٹہ چوک، شادمان ،ایبٹ روڈ ،لکشمی چوک ،مال روڈ ،شمالی لاہور ،چائنہ سکیم ،شالامار باغ،گرھی شاہو ،انارکلی،مغلپورہ ،سٹیشن ،اندرون شہر ،راوی روڈ ،بادامی باغ ،شادباغ کے علاقوں سے کوڑا نہ اٹھایا گیا ۔ ان علاقوں میں صفائی کی ذمہ داری البراک کے پاس ہے ۔ صفائی کی مانیٹرنگ کی ذمہ داری ایل ڈبلیو ایم سی افسران کے پاس ہے ۔ صفائی کرانے والے کنٹریکٹرز کے تین ارب روپے کمپنی کے ذمہ واجب الادا ہیں۔شہر سے روزانہ ساڑھے پانچ ہزار ٹن کوڑا اٹھایا جاتا ہے ۔ موجودہ صورتحال میں آدھے شہر کی سڑکوں پر پانچ ہزار ٹن کوڑا موجود ہے ۔چیئرمین ایل ڈبلیو ایم سی ملک امجد نون کا کہنا ہے کہ شہر کو بہت جلد زیرو ویسٹ کر دیا جائے گا ۔بین الاقوامی کنٹریکٹرز ہمارے بھائی ہیں ،ہم ان کے اولین ترجیح پر مسائل حل کریں گے ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں