75

موٹر وے زیادتی کیس؛ مرکزی ملزم عابد ملہی کی نئی تصاویر منظرعام پرآگئیں

موٹروے زیادتی کیس کے مرکزی ملزم عابد کی نئی تصاویر سامنے آئی ہیں۔
موٹر وے پر خاتون سے زیادتی کے مرتکب دو ملزمان میں سے ملزم شفقت کے بعد مرکزی ملزم عابد ملہی کو بھی واقعے کے 33 دن بعد گرفتار کرلیا گیا تھا۔ ملزم کی گرفتاری کے بعد پہلی بار اس کی تصاویر منظر عام پر آئی ہیں، جس میں وہ پہلے کی نسبت مختلف نظرآرہا ہے۔
عابد ملہی کیسے گرفتار ہوا ؟
ذرائع کا کہنا ہے کہ پنجاب پولیس کو 34 روز تک تگنی کا ناچ نچانے والا عابد ملہی پولیس چھاپے سے فرار ہونے کے بعد ننکانہ سے بھاگ کر لفٹ لے کر فیصل آباد آیا، فیصل آباد سے مانگا منڈی اپنے والد کے پاس پہنچا، وہاں سے ایک شہری سے لفٹ لے کر چنیوٹ کی طرف چلا گیا تھا، ملزم نے شہری کو بتایا کہ وہ گھر سے لڑ کر آیا ہے اور اس کے پاس پیسے بھی نہیں ہیں، لفٹ دینے والے شہری نے ملزم کو گاؤں کے ایک بندے کے پاس کام پر رکھوا دیا تھا، مفروری کے دوران عابد گاؤں میں بھینسوں کے لئے چارہ وٖغیرہ کا کام کرتا رہا۔
ملزم نے وہاں سے 800 روپے لیے اور واپس مانگا منڈی اپنے والد کے پاس پہنچا، اس دوران ملزم کا والد علاقے کے معزز خالد بٹ سے عابد کو پولیس کے سامنے پیش کرنے کی درخواست کرتا رہتا تھا۔ خالد بٹ نے ہی ملزم کی گرفتاری میں سی آئی اے ماڈل ٹاون کی مدد کی، خالد بٹ کی گاڑی میں ہی عابد کو سی آئی اے ماڈل ٹاؤن منتقل کیا گیا۔
کیس کا پس منظر
9 ستمبر کو لاہور کے علاقے گجر پورہ میں موٹر وے پر خاتون کو اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنانے کا واقعہ پیش آیا تھا، ملزمان خاتون سے ایک لاکھ نقدی ، 2 تولے طلائی زیورات، ایک عدد برسلیٹ، گاڑی کا رجسٹریشن کارڈ اور 3 اے ٹی ایم کارڈز لے کر فرار ہو گئے تھے۔ ایک ملزم شفقت کو واقعے کے کچھ ہی دنوں بعد گرفتار کرلیا گیا تھا لیکن دوسرا ملزم عابد ملہی مفرور تھا جسے گزشتہ روز گرفتار کیا گیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں