113

DHA فیز13لاہور کی فائلوں کی خریدوفروخت میں تیزی کا رجحان

DHA فیز 13کیلئے رقبہ ایکوائر کرنے کا عمل جاری ہے ان دنوں مارکیٹ میں 10,5 مرلہ اور ایک کنال کی فائلز کی خریدوفروخت میں تیزی دکھائی دے رہی ہے۔ DHAسٹی کے نام سے شہرت پانے والے منصوبے کو 2019ءکے وسط میں DHA فیز 13 کا نام دیدیا گیا۔ اسی سال سپریم کورٹ کے حکم سے تمام پلاٹس مالکان کو الاٹمنٹ لیٹرز جاری کر دیئے گئے۔ DHA کا یہ نیا فیز ڈی ایچ اے فیز ون سے تقریباً 34کلو میٹر کی مسافت پر شہر لاہور کی مغربی سمت میں واقع ہے۔ یہ فیز سینکڑوں ایکڑ رقبہ پر مشتمل ہے۔محل وقوع کے اعتبار سے فیز 13 کے ایک طرف قطار بند روڈ‘ دوسری جانب دریائے راوی جبکہ تیسری سمت میں لاہور اسلا م آباد موٹر وے اور چوتھی طرف ملتان روڈ واقع ہے۔ لاہور رنگ روڈ ویسٹرن سائیڈ کے باعث اس فیز کی لوکیشن اہمیت کی حامل ہے۔ قابل ذکر بات یہ ہے کہ DHA فیز 13 کی ٹاﺅن پلاننگ جدید خطوط پر کی جا رہی ہے۔ یاد رہے کہ DHA سٹی کا منصوبہ سابق آرمی چیف جنرل اشفاق کیانی کے بھائی کامران کیانی کی ملکیتی کمپنی “Globaco” پرائیویٹ لمیٹڈ اور DHA نے مشترکہ طور پر تقریباً 25000 کنال رقبہ پر اسے ڈویلپ کرنا تھا لیکن نہ جانے کیوں یہ کمپنی بہت کم رقبہ ایکوائر کر پائی اور اوورسیز پاکستانیوں سمیت شہدا کے ورثاکے اربوں روپے ہضم کر گئی سپریم کورٹ نے ڈی ایچ اے سٹی کے متاثرین کے کیس کو ہنگامی بنیادوں پر سنا اور جنوری 2019ءمیں حکام کو 11000 متاثرین کو پلاٹو ںکے الاٹمنٹ لیٹر جاری کرنے اور منصوبے کو اپنے ذمہ لینے کا حکم صادر کیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں